روٹی (Roti)

“تین روٹی ملے گی؟” گھنے بال اور نیلی آنکھوں والے گورے چٹے بچے نے ہوٹل پر بیٹھے مالک سے سوال کیا۔ بچے کی جگہ جگہ سے پھٹی بنیان سے اس کی غربت کا اندازہ بخوبی لگایا جا سکتا تھا۔ مالک نے مونچھوں کو تاؤ دیتے ہوئے بچے کو بغور دیکھا اور کہنے لگا، “تو پھر آ گیا؟ تجھے منع کیا تھا نا؟ بھاگ یہاں سے۔” “تین روٹی ملے گی؟” بچے نے پھر ضد کی۔ وہی کام کرے گا پھر؟ سوچ لے۔” “بلکل کروں گا۔ روٹی ملے گی نا؟” دس بارہ سال کے بچے کی آنکھوں میں چمک نمایاں تھی۔ اسے یقین تھا کے پچھلے دو دن کی طرح آج بھی اسے یہاں سے کھانا نصیب ہو جائے گا۔ “اے مجو! ہوٹل سنبھال، میں ابھی آیا۔ چل حرامی! تو بھی روز آ جاتا ہے۔” اس نے بچے کا ہاتھ پکڑا اور دو گلیاں چھوڑ کر ایک کچے مکان کے دروازے کے آگے رک گیا اور سامنے لگے ٹین کے دروازے کو زور زور سے پیٹنے لگا۔ کچھ دیر بعد کنڈی کھلی اور ایک لمبا چوڑا شخص شلوار پہنے جمائیاں لیتا ہوا باہر آیا۔ “اے شاکے! ہاں ہاں پتہ ہے تو ابھی مرا پڑا ہے، لیکن دیکھ یہ آج پھر آیا ہے، جلدی کام ختم کر۔ اور دیکھ زخم نہ لگے، کیس میس نہیں مانگتا مجھے، بس جلدی کر۔” شاکے نے اپنی تھوڑی کجھائی، ننھے بچے کو دیکھ کر قہقہہ لگا کر اسکا ہاتھ پکڑ کر اندر گھسیٹ لیا اور دروازہ بند کرتے وقت بولا، “ابے جا، کچھ نہیں ہوگا۔ تو یہیں کھڑا مونچھ نوچ، میں پندرہ منٹ بعد بھیجتا ہوں ہیرے کو۔ آجا میری جان اندر۔

 

” تھوڑی دیر بعد اندر سے دل دہلا دینے والی چیخیں سنائی دینے لگیں۔ ایسا لگتا تھا جیسے کسی کی روح نکالی جا رہی ہو۔ لرزہ دینے والا شور، وہشت زدہ چیخیں، دل دہلانے والی کرب ناک آہیں۔ وقفے وقفے سے رونے کی آوازیں بھی سنائی دیتی تھیں جس میں سسکیاں اور تڑپ گھلی ملی ہوتی تھیں۔ مگر عرش نہیں کانپا نہ ہی شاکے کا بے حس دل۔ وقت گزرتا جا رہا تھا، اور باہر کھڑے ہوٹل کے مالک کا پان ختم ہونے کو تھا۔ اس نے پیک زدہ گندہ منہ کھولا اور سامنے کی دیوار پر تھوک کر ٹین کا دروازہ زور سے بجایا، “چل بھئی بس کر، مر جائے گا۔” اندر سے چیخوں کی آوازیں معدوم ہوتی گئیں۔ آس پاس کے گھروں سے کسی نے شور پر جھانکنا مناسب نہیں سمجھا تو انسانیت نے شاید گھہری نیند کو خراب کرنے کے بجائے ہوٹل کے مالک کی طرف کروٹ بدل لی۔ کچھ دیر میں ٹین کا دروازہ کھلا اور بچہ اپنی نیلی آنکھوں سے آنسو پونچھتا، لنگڑاتا ہوا باہر آگیا۔ گورے جسم پر جابجا نیل کے نشان نمایاں تھے۔ بکھرے بال اور چہرے پر تھپڑوں کے لال نشان سورج کی تمازت کو دھوکا دیتے محسوس ہوتے تھے۔ بچے نے منہ صاف کر کے ہوٹل کے مالک کے آگے ہاتھ پھیلائے تو اس نے جیب سے تین ٹوکن نکال کر اس کے ہاتھ میں رکھ دئے، “مجو تین روٹیاں دے گا اس کے بدلے، جا لے جا۔

 

” بچہ اثبات میں سر ہلا کر خاموشی سے گلی کے کونے کی طرف دھیمی چال سے چل پڑتا پے۔ “دیکھ شاکے، تیرے دو ہزار رہ گئے ہیں، وہ میں یہ بتا کہ تجھے اس سے کیا ملتا ہے؟” شاکے نے پیک پھینکی دیوار سے اپنی عریاں کمر ٹکائی اور کہنے لگا، “تو نہیں سمجھے گا۔ مجھے مارنے راحت ملتی ہے۔ حوس کا پجاری نہیں ہوں میں۔ بس تھپڑوں کی جھنکار اور چیخوں کی موسیقی سے بڑا آرام ملتا ہے۔ چاہے وہ عورت ہو یا بچہ۔ لطف آتا ہے جب وہ تڑپتا ہے۔ لال اور نیلے نشان جسم کو چور چور کرتے ہیں اور میری آنکھوں کی چمک کو بڑھاوا دیتے ہیں۔۔ مجھے چلچلاتی مار، ان زناٹے دار تھپڑوں اور نیل پڑے گورے بدن سے عشق ہے۔ چل دفع ہو جا بے غیرت روز کسی کو لے آتا ہے۔ بھاگ جا۔” شاکا یہ کہہ کر ٹین کا دروازہ بند کرتا ہے اور ہوٹل کا مالک اسے دل ہی دل میں ماں بہن کی گالیاں دیتا وہاں سے ہوٹل کی طرف چل پرتا ہے۔ “ماں دیکھ میں تین روٹی لے آیا۔ تیری، میری اور ابا کی۔” “آج پھر کسی سے لڑ کے آیا ہے نا تو؟ پورا جسم نیلا پڑا ہے۔” “اماں چھوڑ، تو سالن لائی؟” “ہاں ہاں سب ہے، جا ابا کو دے آ۔” ننھا بچہ دھیرے سے اٹھ کے چارپائی پر پڑے معذور باپ کے پاس جاتا ہے، “لے ابا روٹی کھا۔” ابا کھانا ہاتھ سے پکڑ کر زوردار تھپڑ بچے کے گال پر رسید کرتا ہے، “منحوس، لڑتا ہے جا کر؟ ادھر آ تجھے بتاؤں، بچپن سے پٹ رہا ہے اور سدعرے گا نہیں ذلیل۔”

دور فرش پہ گرا بچہ خاموشی سے اٹھ کر کہتا ہے، “ابا کھانا کھا لے۔” بچہ فرش پر اماں کے ساتھ بیٹھ کر روٹی کا نوالہ توڑتا ہے اور ماں کے ہاتھ بکھرے بال اور ہاتھوں پر نیل کے نشان دیکھ کر کہتا ہے، “اماں یہ کیا ہوا؟” اماں دھیرے سے مسکرا کر کہتی ہے، “میری بھی آج لڑائی ہو گئی تھی، تو زیادہ سالن لگا کر کھا، مجو کے ہوٹل سے لائی ہوں۔

 

” Teen roti milay gi? ” Ghannay baal aur neeli ankhon walay goray chittay bachay ne hotel pe bethay malik se sawal kiya. Bachay ki jaga jaga se phatti banyan se us ki gurbat ka andaza bakhobi lagaya jaskta tha. . Malik ne moonchon ko tao detay hoye bachay ko baghor dekha aur phr kehne laga, “Tu phir agya? Tujhay mana kiya tha na? Bhag yahan se. ” “Teen roti milay gi? ” bachay ne phir zid ki. . “Wohi kaam kere ga phir? Soch le” . “Bilkul karun ga. Roti milay gi na? ” das bara saal ke us bachay ki ankhon mai chamak numayan thi. Usay yaqeen tha ke pichlay do din ki tarhan aj bhi usay yahan se khana naseeb hojayega. . “Aeeyy majjo, hotel sambhal main abhi aya. Chal harami. Tu bhi roz ajata hai” Monchon ko tao detay hoye usne bachay ka hath pakra aur phir bachay ko lekar do galiyan chor ker aik kachay makan ke darvazay ke samnay ruk gya aur samne lage teen ka darvazay ko peetne laga. Kuch dair baad kundi khuli aur aik lamba shakhs shalwar pehnay jamaiyan leta bahar nikal aaya.

 

“Ae shaqqay, han han pata hai tu abhi mara para hai, lekin dekh ye phir aya hai, jaldi kaam khatam ker aur dekh zakham na lagay, case mase nahi mangta mjhay, jaldi kar bs.” Shaqqay ne apni thori khujai, aur us nannay se bachay ko dekh ke qehqaha lagaya aur phir, hath pakar ker bachay ko andar ghaseet liya aur teen ka darwaza band kerne se pehlah kehne laga, “Abay ja, kuch nahi hoga, tu yahin khara mooch noch, 15 mint bad bhejta hun heeray ko. Aja jaan meri andar” . Thori dair baad hi bahar kharay hotel ke malik ko andar se dil dehladene wali cheekhain sunayi denay lagin. Aesa lag rha tha jese kisi ki rooh nikali jarhi ho. Larza dene wala shor, wehshat zada cheekhain, dil dehlanay wali karb naak aahain. Waqfay waqfay se ronay ki awazain bhi aatin jis mai siskiyan aur tarap ghulli mili hoti. Magar arsh nahi kanpa aur na hi shaqqay ka behis dil. . Waqt guzarta ja rha tha aur bahar kharay hotel ke malik ka paan apne ikhtitami marahil mai tha. Us ne peek bhara apna ganda mu khola aur samnay ki diwar pe thook ke teen ka darwaza zor se bajaya, “Chal bhai bas ker, marr jayega” . Andar se chekhon ki awaz madoom hoti gayi. Aas pas ke gharon se kisi ne shorr per jhakna munasib nahi samjha tha isi liye insaniyat ne shayad gehri neend ko khrab kerne ke bajaye hotel ke malik ki taraf karwat badal li thi. . Kuch dair men teen ka darwaza khula aur bacha apni neeli ankhon se ansu pochta, largrata hua bahar agya.

 

Goray jism pe ja baja neel ke nishan numayan thay. Bikhray baal aur chehray pe thapparon ke laal nishan soraj ki tamazat ko dhoka detay mehsoos hotay. Bache ne mu saaf ker k, hotel ke malik ke agay hath pehlae to us ne jaib se teen token nikal Ker us ke hath pe rakh diye. “Majjo teen roti dega is ke badlay ja leja” Bacha asbaat mai sir hilata hai aur khamoshi se gali ke konay ki taraf dheemi chaal se chal para. . “Dekh shaqqay, tere 2000 reh gye hain, wo mai aesai poray kerdunga. Tu mjhay ye bta ke tujhay is se kiya milta hai? ” Shaqqay ne peek phenki dewaar se apni aryaan kamar tikayi aur kehne laga, “Tu nahi samjhay ga. Mujhay maarne se bari rahat milti he. Hawas ka pujari nahi hon main. Bus thappar ki jhankar aur chekhon ki moseqi se bara araam milta hai. Chahay wo aorat ho ya bacha. Lutf ata hau jab wo tarapta hai. Laal aur neelay nishan jism ko choor choor kerte hain aur meri ankhon ki chamak ko barhawa detay hain. Mjhay is chilchilati maar, in zannatay dar thapparon aur neel paray goray badan se ishq he Chal dafa hoja begairat roz le ker kisi ko ajata hai. Bhaag ja” . Shaqqa ye keh ker teen ke darwaza band kerleta hai aur hotel ka malik dil hi dil mai shaqqay ko maa behen ki galiyan deta hotel ki taraf ravana hojata hai. . “Maaa, dekh mai teen roti le aya. Teri meri aur abbay ki” “Aaj phir kisi se larke aya hai na tu, pora jism neela para hai?” “Amma chor, ye dekh roti to salan layi? ” “Han han sab hai, ja abbay ko de aa” Nanna bacha dheray se uth ke charpai pe bethay mazoor baap ke pas jata hai. “Le abbay roti kha” Abba khana aik hath se pakar ke dosre hath se zoor daar thappar bachay ke gaal per raseed kerta hai. . “Manhoos, pillay, larta hai ja ker? Idhar aa, tujhay batao, paas aa, bachpan se pit rha hai oer sudhray ga nahi zaleel, haraam ke jannay” .

 

Door farash pe gira bacha khamoshi se uth kar kehta he, “Abbay khana khalay” Jis ke jawab mai usay kayi gaaliyan bulund awaz se abbay se naseeb hotin hen. . Bacha farash pe amma ke sath beth ke roti ka nivala torta hai aur amma ke bikhray baal aur hathon per neel ke nishan dekh ker kehta hai, “Amma ye kiya huwa? ” Amma dheray se muskuratay hoye kehti hai, “Meri bhi aaj larayi hogyi thi, tu zada se zada salan laga kar kha, majjo ke hotel se layi hon”

 

Megatale By Asaad Tariq

Share With Friends